Main Site aawsat.com/urdu

ماسکو "آستانہ 2" کے متوقع نتائج پر بات کر رہا ہے - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: منگل, 14 فروری, 2017
0

ماسکو "آستانہ 2” کے متوقع نتائج پر بات کر رہا ہے

"آزادیٔ شام تحریک” "جند الاقصی” کو "توبہ کرنے یا مرنے” کا اختیار دے رہی ہے

1487012654808708700

 

ماسكو: طہ عبد الواحد – بيروت: يوسف دياب

      روسی باخبر ذرائع نے بتایا کہ ماسکو کل اس کی میزبانی میں ہونے والے آستانہ مذاکرات میں زمینی صورت حال کے پیش نظر اس کے نتائج کے حصول کی کوشش کرے گا۔

      ذرائع نے اس بات پر زور دیا کہ ان نتائج کا مقصد یہ ہے کہ شامی مذاکراتی جماعتیں اور آستانہ عمل کی نگرانی کرنے والی بیرونی طاقتیں پیش رفت کو محسوس کر سکیں اور آئندہ جنیوا مذاکرات کے دوران حقیقی نتائج کے حصول میں اپنا کردار ادا کریں”۔

      زمینی حقائق میں، کل شام کے شمالی دیہات حماہ میں دو متشدد دھڑوں کے مابین تصادم میں اضافہ ہوا۔ جبکہ "آزادیٔ شام تحریک”؛ جو کہ "نصرت فرنٹ” کی تنظیم "جند الاقصی بریگیڈ” پر غلبہ حاصل کر چکی ہے، اس نے شاہراہوں کو کھولنے اور رکاوٹوں کو اٹھانے تک جنگ جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کیا، علاوہ ازیں (جند الاقصی) مسلمانوں کو کافر قرار دینے سے توبہ کریں اور قانونی عدالت میں پیش ہوں، انہیں "توبہ کرنے یا مرنے” میں سے کسی ایک کو اختیار کرنا پڑے گا۔

منگل 18 جمادى الاول 1438 ہجری ­ 14 فروری 2017 ء  شمارہ: (13958)
الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>